Awwaaz-Pakistan

آواز پاکستان ایک ایسی ویب سایٹ ہے جہاں آپ کرپشن، ناانصافی اور طاقت کا ناجاۂز استعمال، وڈیو، آڈیو اور تصویر کی شکل میں شاۂع کر سکتے ہیں۔

Awwaaz Pakistan is a website for you to post incidents of corruption, nepotism, misuse of government authority in video, audio and image formats.

The Weekly

LATEST NEWS

* If requested we will refer your experience to the concerned authorities for action and follow-up... * Al-Azizia case: Sharif family requests questionnaire from NAB.....Pakistan seeks recognition of sacrifices in war against terror: COAS......NAB contacts SBP, prepares references against Ishaq Dar....Preparations for state funeral of Dr Ruth Pfau completed ...
Press ESC or click HERE to close the video


الیکشن کمیشن کے ممبران غیرقانونی طور پر ماہانہ لاکھوں کماتے رہے:رپورٹ

http://www.awwaaz.com/images/stories/الیکشن کمیشن کے ممبران غیرقانونی طور پر ماہانہ لاکھوں کماتے رہے:رپورٹ
Share on :
Description

اسلام آباد: ایک تحقیقاتی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ الیکشن کمیشن کے چار ممبران بنا کسی قانون یا باقائدہ منظور شدہ قانونی ضابطے کے بنا ہی ماہانہ لاکھوں کی مراعات گھر لیجاتے رہے ۔ تفصیلات کے مطابق ایک سئینئرصحافی نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ الیکشن کمیشن کے چار ممبران جن کا تقرر2011میں کیا گیا تھااپنا پانچ سالہ عرصہ ملازمت پوری کرکے 2016میں ریٹائر بھی ہوچکے ہیں کی تنخواہوں کا معاملہ پارلیمنٹ کے منظور شدہ ایکٹ سے طے ہونا تھا مگر پانچ سال گزر جانے کے باوجود کوئی ایسا قانون سرے سے بنایا ہی نہیں جاسکا ہے۔تنخواہوں کی وصولی کیلئے الیکشن کمیشن کے ارکان نے AGPRکو خط کے زریعے لکھا کہ ہمیں ساڑھے آٹھ لاکھ روپے ماہانہ کے پیکج کے مطابق تنخواہیں دی جائیں۔الیکشن کمیشن کے ارکان نے صرف اپنی پسند کی تنخواہوں ر ہی اکتفا نہیں کیا بلکہ اپنی مرضی کے الاؤنس اور دیگر مراعات بھی خود ہی نہ صرف طے کرلیں بلکہ سرکاری خزانے سے وصول بھی کرتے رہے۔AGPR نے جب ان تنخواہوں اور مراعات کی بابت وزارت قانون سے دریافت کیا تو انہوں نے مبینہ طور پر AGPRکو ہدایت کی مراعات اور تنخواہیں دیتے ہیں مگر ان ارکان کو سیاسی دباؤ میں رکھنے کیلئے ان سے لکھوا لیں کہ قانون نہ بننے کی صورت میںیہ ارکان تنخواہیں واپس کرنے کے پابند ہونگے۔سیاسی بلیک میلنگ سمجھیں یا دھاندلی کا آغاز یہ معزز ممبران آ ٹھ لاکھ پنشن اور آٹھ لاکھ ماہانہ تنخواہ یعنی ہر ماہ سولہ لاکھ روپے کھرے کرتے رہے اور یہ سب غیر قانونی طور پر ہوتا رہا۔انکشاف ہوا ہے کہ جان بوجھ کر ان ارکان کی تنخواہوں پر قانون سازی نہیں کی گئی کہ ان پر حکومتی دباؤ برقرار رکھ کے ان سے اپنی مرضی کا کام لیا جاسکے۔شاید اسی لئے تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے بھی الزام لگایا تھا کہ ارکان حکومتی پے رول پر ہیں۔مبصرین کے مطابق اسی روش کو برقرار رکھتے ہوئے اب تک نئے ممبران کیلئے بھی کوئی قانون سازی نہیں کی گئی اور شاید تحریک انصاف اور دیگر جماعتیں بھی سو رہی ہیں تاکہ حکومت ایک بار پھر وہی کھیل نہ صرف کھیل سکے بلکہ جیت بھی جائے۔

Add Comment تبصرہ شامل کریں
Comments تبصرے
  • abcd says :

    2016-07-01 01:06:44

    Why there is no check on them, that what are they doing with our money... they are having it in what ever way they like...


Visitors Count

Visitors





OR یا

          OR یا





            -Please provide your email or phone number for verification of your upload, Your information will be kept confidential اپلوڈ کی تصدیق کے لیے اپنا ای میل یا فون نمبرفراحم کریں،آپ کی معلومات کو خفیہ رکھا جاۓ گا۔